ﭘﺭﻧﺱ ﻭﻟﻳﻡ ﮐﺎﺅﻧﮢﯽ ﭘﺑﻠﮏ ﺳﮑﻭﻟﺯ (PWCS) ﻣﻼﺯﻣﺕ ﻣﻳں ﻳﺎ ﺍﭘﻧﮯ ﺗﻌﻠﻳﻣﯽ ﭘﺭﻭﮔﺭﺍﻣﻭں، خدمات ﺍﻭﺭ ﺳﺭﮔﺭﻣﻳﻭں ﻣﻳں ﻧﺳﻝ، ﺭﻧﮓ، ﻣﺫﮨﺏ، ﻗﻭﻣﯽ ﻧﺳﺏ، جنس، صنفی شناخت، جنسی بنیاد، حمل، پچے کی پیدائش ﻳﺎ ﻣﺗﻌلقہ ﻁﺑﯽ ﮐﻳﻔﻳﺎﺕ، بشمول دودھ پلانا، ﻋﻣﺭ، ﺍﺯﺩﻭﺍﺟﯽ ﺣﻳﺛﻳﺕ، ﺳﺎﺑﻕ ﻓﻭﺟﯽ ﺣﻳﺛﻳﺕ، ﻣﻌﺫﻭﺭی، وراثتی معلومات ﻳﺎ کسی اور ﺑﻧﻳﺎﺩ ﭘﺭ ﺍﻣﺗﻳﺎﺯی ﺳﻠﻭک نہیں کرتا جو قانونی طور پر منع ہے۔

ﭘﺭﻧﺱ ﻭﻟﻳﻡ ﮐﺎﺅﻧﮢﯽ ﭘﺑﻠﮏ ﺳﮑﻭﻟﺯ (PWCS) ﻣﻼﺯﻣﺕ ﻣﻳں ﻳﺎ ﺍﭘﻧﮯ ﺗﻌﻠﻳﻣﯽ ﭘﺭﻭﮔﺭﺍﻣﻭں، خدمات ﺍﻭﺭ ﺳﺭﮔﺭﻣﻳﻭں ﻣﻳں ﻧﺳﻝ، ﺭﻧﮓ، ﻣﺫﮨﺏ، ﻗﻭﻣﯽ ﻧﺳﺏ، جنس، صنفی شناخت، جنسی بنیاد، حمل، پچے کی پیدائش ﻳﺎ ﻣﺗﻌلقہ ﻁﺑﯽ ﮐﻳﻔﻳﺎﺕ، بشمول دودھ پلانا، ﻋﻣﺭ، ﺍﺯﺩﻭﺍﺟﯽ ﺣﻳﺛﻳﺕ، ﺳﺎﺑﻕ ﻓﻭﺟﯽ ﺣﻳﺛﻳﺕ، ﻣﻌﺫﻭﺭی، وراثتی معلومات ﻳﺎ کسی اور ﺑﻧﻳﺎﺩ ﭘﺭ ﺍﻣﺗﻳﺎﺯی ﺳﻠﻭک نہیں کرتا جو قانونی طور پر منع ہے۔  

رابطہ معلومات

مزید معلومات، یا امتیازی سلوک یا ہراسانی میں شامل ہونے کی رپورٹ کرنے یا ایک یا زیادہ طلباء کی نشاندہی کرنے کے لیے، براہ مہربانی درج ذیل سے رابطہ کریں:

Dana Scanlan، ایکویٹی اینڈ اسٹوڈنٹ ریلیشنز ایڈمنسٹریٹر اور ٹائٹل IX کوآرڈینیٹر
Carey Williams، ایکویٹی تفتیش کار
مائیکل جونز، ایکویٹی تفتیش کار

ٹیلی فون: 6839-374-571
فیکس نمبر: 2230-503-571
ای میل: TitleIXEquity@pwcs.edu

ڈاک کا پتہ:
Equity and Student Relations Department
P.O. Box 389
Manassas, VA 20108

دفتر کا پتہ:
14800 Joplin Rd.
Building 49
Manassas, VA 20112

عدم امتیازی سلوک کی شرائط سے متعلق سوالات امریکہ محکمۂ تعلیم میں شہری حقوق کے دفتر (OCR) سے براہ راست پوچھے جا سکتے ہیں۔ ورجینیا میں OCR کے دفتر کا پتہ درج ذیل ہے:

Office for Civil Rights
U.S. Department of Education
400 Maryland Ave. SW
Washington, DC 20202-1475

ٹیلی فون: 6020-453-202
TDD: 1-800-877-8339
فیکس نمبر: 6021-453-202
ای میل: OCR.DC@ed.gov

جنسی ہراسانی

1972 کا تعلیمی ترمیم کا ٹائٹل IX اور سکول بورڈ پالیسی 738 صنفی شناخت اور جنسی بنیاد سمیت جنس کی بنیاد پر ہراسانی کی ممانعت کرتا ہے۔ PWCS تمام طلباء کی حوصلہ افزائی کرتا ہے اور تمام ملازمین سے تقاضا کرتا ہے کہ جنسی نوعیت کی بدسلوکی کی رپورٹ فوری طور پر سکول حکام کو دیں۔ جنسی بدانتظامی کی اطلاع دینے کے طریقہ کے بارے میں معلومات کے لیے، ذیل کا سیکشن دیکھیں جس کا عنوان ہے "ایک یا زیادہ طلباء کے ساتھ جنسی بد سلوکی کی اطلاع دینا۔"

ایک یا زیادہ طلباء پر مشتمل جنسی بدانتظامی کی رپورٹ موصول ہونے کے بعد، ٹائٹل IX کوآرڈینیٹر اس بات کا تعین کرے گا کہ آیا مبینہ بدسلوکی ٹائٹل IX جنسی ہراسانی کو تشکیل دے سکتی ہے جیسا کہ اس کی تعریف ضابطہ 1-738، "طلباء کی جنسی بدسلوکی کے الزامات کا حل" میں کی گئی ہے۔ اگر مبینہ بدسلوکی ٹائٹل IX جنسی ہراسانی تشکیل دے سکتی ہے، تو PWCS مبینہ طور پر ہراساں کیے جانے کے اطلاع شدہ ہدف (شکایت کنندہ) اور اس طالبعلم کو جس پر ہراساں کرنے کا الزام لگایا گیا ہے (جواب دہ) کے لیے معاون اقدامات دستیاب ہوں گے۔ امدادی اقدامات کا مقصد نظم و ضبط یا تادیبی نوعیت کا نہیں ہے؛ بلکہ، وہ انفرادی خدمات ہیں جو شکایت کنندہ اور جواب دہندہ کو PWCS تعلیمی پروگراموں اور سرگرمیوں تک رسائی جاری رکھنے کے قابل بنانے کے لیے ڈیزائن کی گئی ہیں جب کہ الزام کی تحقیقات اور انہیں حل کیا جا رہا ہے۔ معاون اقدامات کی مثالوں میں مشاورت، حتمی تاریخوں میں توسیع یا کورس سے متعلق دیگر ایڈجسٹمنٹ، کلاس روم کی سیٹ اور/یا بس اسائنمنٹس میں تبدیلی، کلاس کے نظام الاوقات میں تبدیلی، طلباء کے درمیان رابطے پر پابندی، اور سیکورٹی اور نگرانی میں اضافہ شامل ہیں۔

جنسی بدسلوکی کے الزام کی اطلاع دینے کے علاوہ، ایک شکایت کنندہ ایکویٹی اینڈ سٹوڈنٹ ریلیشنز ڈیپارٹمنٹ کے پاس ٹائٹل جنسی ہراسانی کی باقاعدہ شکایت درج کرا سکتا ہے۔ ایک والد یا والدہ بھی طالبعلم/طالبہ کی طرف سے رسمی شکایت درج کرا سکتے ہیں۔ باضابطہ شکایت درج کرنے کے طریقہ کے بارے میں معلومات کے لیے، ذیل کا سیکشن "ٹائٹل IX جنسی ہراسانی کی رسمی شکایت دائر کرنا" ملاحظہ کریں۔ کسی طالبعلم کے خلاف کوئی بھی رسمی شکایت جو ٹائٹل IX جنسی ہراسانی کو تشکیل دے سکتی ہے اس کی تحقیقات ایکویٹی اینڈ سٹوڈنٹ ریلیشنز ڈیپارٹمنٹ کرے گی۔ ٹائٹل IX کی تحقیقات کے بعد، اگر یہ تعین ہوتا ہے کہ مدعا علیہ نے شکایت کنندہ کو جنسی طور پر ہراساں کیا ہے، تو PWCS ایسے طریقے کو نافذ کرے گا جو PWCS تعلیمی پروگراموں یا سرگرمیوں تک شکایت کنندہ کی مساوی رسائی کو بحال کرنے یا محفوظ رکھنے اور ہراساں کیے جانے کو دوبارہ ہونے سے روکنے کے لیے بنائے گئے ہیں۔ ان طریقوں میں مدعا علیہ کے لیے تادیبی پابندیاں شامل ہو سکتی ہیں؛ مثال کے طور پر، جواب دہندہ کو شکایت کنندہ کے سکول سے مختصر یا طویل مدتی بنیادوں پر ہٹایا جا سکتا ہے۔

طلباء، والدین، اور ملازمین جو جنسی بدسلوکی کے الزامات کی تحقیقات اور حل کے طریقوں کے بارے میں مزید معلومات حاصل کرنا چاہتے ہیں ان کو تلقین کی جاتی ہے کہ وہ ایکیوٹی اینڈ سٹوڈنٹ ریلیشنز ڈیپارٹمنٹ سے رابطہ کریں۔

جنسی ہراسانی کی رپورٹ کرنا

کوئی بھی شخص جنسی بدسلوکی کی اطلاع دے سکتا ہے۔ ايک طالبعلم يا والد يا والدہ کو فوری طور پر ٹائٹل IX کوآرڈينيٹر، پرنسپل يا اسسٹنٹ پرنسپل کو اس طرح کی بدسلوکی کی اطلاع دينی چاہيے (اگرچہ PWCS کے کسی بھی ملازم کو جنسی بدسلوکی کی رپورٹ موصول ہو سکتی ہے)? ايک PWCS ملازم سے تقاضا کيا جاتا ہے کہ وہ پرنسپل؛ اسسٹنٹ پرنسپل؛ کو جنسی بدسلوکی کی اطلاع دے يا؛ اگر ملازم سکول کا ملازم نہيں ہے تو ملازم کے سپروائزر کو اطلاع دے۔

جنسی ہراسانی کی باقاعدہ شکایت کا آغاز کرنا

ٹائٹل IX جنسی ہراسانی کی ايک رسمی شکايت ايک تحريری دستاويز ہے جو شکايت کنندہ، شکايت کنندہ کے والد يا والدہ، يا ٹائٹل IX کوآرڈينيٹر کے ذريعہ دائر اور دستخط شدہ ہے، جس ميں جنسی ہراسانی کا الزام لگايا گيا ہے اور PWCS سے تحقيقات کي درخواست کی گئی ہے۔ باضابطہ شکايت جس ميں ايک يا زيادہ طلباء شامل ہوں ٹائٹل IX کوآرڈينيٹر کے پاس ذاتی طور پر يا يو ايس يا اليکٹرانک ميل کے ذريعے درج کرانا ضروری ہے۔ ٹائٹل IX جنسی ہراسانی فارم کي رسمی شکايت کے استعمال کی بہت زيادہ حوصلہ افزائی کي جاتی ہے، اگرچہ لازمی نہيں ہے۔ ٹائٹل IX جنسی ہراسانی کے فارم کی رسمی شکايت کا PDF ورژن ذيل ميں "اضافی معلومات" کے سيکشن ميں موجود ہے۔ ٹائٹل IX کوآرڈينيٹر سے فارم کے اليکٹرانک ورژن کی بھی درخواست کی جا سکتی ہے۔

رازداری

ممکنہ حد تک، جنسی بدسلوکی کی رپورٹ يا ٹائٹل IX جنسی ہراسانی کی رسمی شکايت سے متعلق معلومات کو خفيہ رکھا جائے گا۔ جب کوئی شکايت کنندہ رازداری کی درخواست کرتا ہے تو درخواست PWCS کی تحقيقات کرنے اور ضروری اصلاحی کاروائی کرنے کی صلاحيت کو محدود کر سکتی ہے۔ جب شکايت کنندہ جنسی ہراسانی کی اطلاع ديتا ہے ليکن درخواست کرتا ہے کہ PWCS تحقيقات نہ کرے، PWCS اس بات کا تعين کرے گا کہ آيا وہ قابل اطلاق قوانين کے مطابق درخواست کا احترام کر سکتا ہے۔ کچھ حالات ميں، PWCS اس بات کا تعين کر سکتا ہے کہ اسے قانون نافذ کرنے والے اداروں يا چائلڈ پروٹيکٹيو سروسز کو الزامات کی تحقيقات اور/يا رپورٹ کرنا چاہيے۔

جوابی کاروائی اور غلط بیانات کی ممانعت ہے

جنسی بد سلوکی کی اطلاع دينے والے فرد کے خلاف انتقامی کارروائی؛ ٹائٹل IX جنسیہراسانی کی باقاعدہ شکايت دائر کرنا؛ يا اس ميں حصہ ليتا ہے، يا اس ميں حصہ لينے سے انکار کرتا ہے، تفتيش سختی سے ممنوع ہے۔ اسی طرح جان بوجھ کر جھوٹی رپورٹ، شکايت يا بيان دينا سختی سے منع ہے۔ PWCS کا طالبعلم يا ملازم جو اس طرح کی بدسلوکی ميں ملوث ہوتا ہے وہ PWCS کے قابل اطلاق ضوابط کے تحت نظم و ضبط کے تابع ہے۔

ﭘﺭﻧﺱ ولیئم ﮐﺎﺅﻧﮢﯽ ﭘﺑﻠﮏ ﺳﮑﻭﻟﺯ ٹائٹل نائن ٹیم کی تربیت

PWCS ٹائٹل IX ٹيم کے اراکين کے پاس موجودہ رہنما اصولوں پر تازہ ترين معلومات موجود ہيں اور وہ درج ذيل عنوانات پر تربيت ميں شرکت کرنا جاری رکھيں گے جيسے جنسی ہراسانی کی تعريف؛PWCS کے تعليمی پروگرام يا سرگرمی کا سکوپ؛ تحقيقات کيسے کريں اور شکايات کے عمل کو کيسے سرانجام ديں؛ بشمول مطابقت کے امور سے نمٹنا اور ايک تحقيقاتی رپورٹ تيار کرنا؛ اور کيسے غير جانبداری سے خدمت انجام دينا، بشمول مسئلے، مفادات کے تنازعات، اور تعصب کے حقائق پر قبل از وقت رائے قائم کرنے سے گريز کرنا۔

امتیازی سلوک یا ہراسانی کے دیگر فارم

1964 کا سول رائٹس ایکٹ کا ٹائٹل VI تعلیمی پروگراموں اور سرگرمیوں میں نسل، رنگ، اور قومیت کی بنیاد پر امتیازی سلوک کی ممانعت کرتا ہے۔ مزید برآں، ورجینیا ہیومن رائٹس ایکٹ، جس کی ورجینیا ویلیوز ایکٹ کے تحت ترمیم کی گئی، تعلیمی پروگراموں اور سرگرمیوں میں نسل، رنگ، مذہب، قومی نسب، جنس، حمل، بچے کی پیدائش یا متعلقہ طبی کیفیات، عمر، ازدواجی حیثیت، یا معذوری کی بنیاد پر امتیازی سلوک کی ممانعت کرتا ہے۔

کوئی بھی طالبعلم/طالبہ جسے یقین ہے کہ نسل، رنگ، مذہب، قومیت، یا کسی دوسری وجہ سے جو قانونی طور پر منع ہے، اس کے ساتھ امتیازی سلوک یا ہراسانی کی گئی ہے (ان قوانین کے علاوہ جو خصوصی تعلیمی خدمات کے تحت ہیں، جو ایسوسی ایٹ سپرنٹنڈنٹ برائے خصوصی تعلیم اور سٹوڈنٹ سروسز اور ڈائریکٹر برائے خصوصی تعلیم کی ذمہ داری ہیں)؛ ایسے طالبعلم/طالبہ کا والد یا والدہ؛ یا کوئی فرد (بشمول دوسرے طالبعلم/طالبہ یا ﭘﺭﻧﺱ ولیئم ﮐﺎﺅﻧﮢﯽ ﭘﺑﻠﮏ ﺳﮑﻭﻟﺯ کے ملازم کے) جسے یقین ہے کہ ایک طالبعلم/طالبہ کے ساتھ امتیازی سلوک یا ہراسانی کی گئی یا کی جا رہی ہے، اسے تلقین کی جاتی ہے کہ وہ طالبعلم/طالبہ کے پرنسپل یا ﭘﺭﻧﺱ ولیئم ﮐﺎﺅﻧﮢﯽ ﭘﺑﻠﮏ ﺳﮑﻭﻟﺯ ٹائٹل IX کوآرڈینیٹر و سٹوڈنٹ ایکیوٹی آفیسر کو ہراسانی کی رپورٹ کرے۔

قانونی طور پر ممنوع امتیازی سلوک یا ہراسانی کی کسی بنیاد کی رپورٹ ملنے کے بعد، ﭘﺭﻧﺱ ولیئم ﮐﺎﺅﻧﮢﯽ ﭘﺑﻠﮏ ﺳﮑﻭﻟﺯ حفاظتی اقدامات کا آغاز کرے گا جو مبینہ ہراسانی روکنے، ایک یا زائد افراد کی حفاظت کرنے، اور تعلیمی پروگرام یا سرگرمی تک مساوی رسائی بحال کرنے یا محفوظ رکھنے کے لیے ڈیزائن کیے گئے ہیں۔ حفاظتی اقدامات میں درج ذیل شامل ہیں مگر ان تک محدود نہیں، مشاورت، حتمی تاریخوں میں توسیع یا کورس سے متعلق دیگر تاریخوں میں تبدیلی، نشست اور/یا بس شیڈول تبدیل کرنا، کلاس شیڈول میں تبدیلی، فریقین کے مابین رابطہ میں پابندیاں، سکول کی سہولیات میں تبدیلیاں اور سکول کیمپس کے مخصوص حصوں کی حفاظت اور نگرانی میں اضافہ۔

ﭘﺭﻧﺱ ولیئم ﮐﺎﺅﻧﮢﯽ ﭘﺑﻠﮏ ﺳﮑﻭﻟﺯ امتیازی سلوک یا ہراسانی کی کسی شکایت کی تحقیقات کرے گا جس میں طلباء شامل ہیں یا مطلوب ہیں۔ ٹائٹل IX اور سٹوڈنٹ ایکیوٹی آفس تحقیقات اور حل کے عمل کی چھان بین یا نگرانی کرے گا اور اہل خانہ کے لیے وسائل کے طور پر بھی خدمات انجام دے گا۔ اگر اس بات کا تعین ہوتا ہے کہ امتیازی سلوک یا ہراسانی کی گئی ہے تو ﭘﺭﻧﺱ ولیئم ﮐﺎﺅﻧﮢﯽ ﭘﺑﻠﮏ ﺳﮑﻭﻟﺯ مناسب اقدامات اٹھائے گا جو ایسے امتیازی سلوک یا ہراسانی کو دوبارہ ہونے سے بچانے کے لیے ڈیزائن کیے گئے ہیں؛ ایسے اقدامات میں درج ذیل شامل ہیں مگر ان تک محدود نہیں، شکار ہونے والے کے سکول سے جرم کرنے والے طالبعلم/طالبہ کی قلیل المدت یا طویل المدت معزولی۔

طلباء، والدین، اور ملازمین جو ہراسانی کے الزامات کی تحقیقات اور حل کے طریقوں کے بارے میں مزید معلومات حاصل کرنا چاہتے ہیں ان کو تلقین کی جاتی ہے کہ وہ ٹائٹل نائن اور سٹوڈنٹ ایکیوٹی آفس سے رابطہ کریں۔ امتیازی سلوک یا ہراسانی کی شکایت، ۔امتیازی سلوک یا ہراسانی کا فارم (PDF)استعمال کرنے ہوئے جمع کرائی جا سکتی ہے

اضافی معلومات

متعلقہ پالیسیاں اور ضوابط

ﭘﺭﻧﺱ ولیئم ﮐﺎﺅﻧﮢﯽ ﭘﺑﻠﮏ ﺳﮑﻭﻟﺯ اس وقت درج ذیل پالیسیاں اور ضوابط کو اپ ڈیٹ کرنے کے عمل میں ہے تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جائے کہ وہ یونائیڈ سٹیٹس کے محکمۂ تعلیم کے ٹائٹل IX کے ضوابط کے مطابق ہوں جو 6 مئی، 2020 کو جاری کیے گئے تھے۔ درج ذیل پالیسیوں اور ضوابط کا جائزہ اور دہرائی کی جا رہی ہے